یا رب یہ کس آسیبِ تمنا کا اثر ہے – آڈیو

تبصرہ کیجیے