تخیلات خرابات شعریات کہ دل

تخیلات خرابات شعریات کہ دل
سخن گری کے پرانے تکلفات کہ دل

سراب کیا ہے یہ تیرے تصورات کہ تو
عذاب کیا ہے یہ دل کے معاملات کہ دل

نئے سرے سے بناؤں مگر بناؤں کیا
اصولِ شعر کہ تصویرِ کائنات کہ دل

دوامِ تشنگئِ غم کا ذمہ‌دار ہے کون
نمِ فرات کہ دل چشمۂِ حیات کہ دل

نہ جانے عظمتِ آدم کا کون وارث ہے
جہانِ رفتہ کے ساتوں عجائبات کہ دل

خدا سے پوچھ کبھی کیا عظیم ہے زاہد
تری زکات کہ دنیا تری صلات کہ دل

ہوا حضور میں راحیلؔ سے جواب طلب
ستم‌ظریف نے کی کیا پتے کی بات کہ دل

راحیلؔ فاروق

(۲۰۰۸ء)

تبصرہ کیجیے