دل

دل بھی تیرے ہی ڈھنگ سیکھا ہے
آن میں کچھ ہے، آن میں کچھ ہے

– میر دردؔ

ایک تبصرہ: “دل”

تبصرہ کیجیے