خفگی

اک کڑا وقت ڈراتا بھی ہے، آتا بھی نہیں
یارِ دل دار خفا بھی ہے، بتاتا بھی نہیں ! !

تبصرہ کیجیے