باوفا کوئی کوئی ہوتا ہے

اُردُو نِگار
باوفا کوئی کوئی ہوتا ہے
میں بھی تھا کوئی کوئی ہوتا ہے

قدر کر میری قدر کر ظالم
دل جلا کوئی کوئی ہوتا ہے

ابنِ آدم کے روگ بہتیرے
لادوا کوئی کوئی ہوتا ہے

کون ظالم نہیں زمانے میں
آپ سا کوئی کوئی ہوتا ہے

دل میں کاہے نہ چور گھر کرتے
در بھی وا کوئی کوئی ہوتا ہے

جس طرح ہم ہیں آپ کے سرکار
بخدا کوئی کوئی ہوتا ہے

سب کا ہوتا ہے درد کوئی نہ کوئی
درد کا کوئی کوئی ہوتا ہے

آئنہ آپ آئنہ بیں آپ
دیکھنا کوئی کوئی ہوتا ہے

یوں تو قاتل ہیں ان گنت راحیلؔ
آشنا کوئی کوئی ہوتا ہے

راحیلؔ فاروق

۴ اپریل ؁۲۰۱۷ء

راحیلؔ فاروق

اُردُو نِگار

ہیچ نہ معلوم شد آہ کہ من کیستم... میرے بارے میں مزید جاننے کے لیے استخارہ فرمائیں۔ اگر کوئی نئی بات معلوم ہو تو مجھے مطلع کرنے سے قبل اپنے طور پر تصدیق ضرور کر لیں!

0 آراء :

ایک تبصرہ شائع کریں