گھمنڈی ماں

اُردُو نِگار
ماؤں کی شیخیاں بھی کتنی پیاری ہوتی ہیں۔
"میرے گلو نے بی اے کر لیا اے۔ کہندا اے امی میں ہن افسر لگ کے تینوں حج کراواں گا۔"
"میرے ننھے دیاں وی مچھاں نکل آئیاں نیں۔ اینا سوہنڑا لگدا اے کی دساں۔ ارہاں آ وے ننھیا، چاچی آئی اے۔"
"میری مانو دا ہاسٹل بڑا چنگا اے۔ ایڈی خوش اے۔ کہندی سی بے بے میرا وزن یارہ کلو ودھ گیا اے۔ روون آلی ہوئی سی۔ میں کہیا چلو چنگا اے۔ تھوڑی ہور موٹی ہو لے فیر کوئی ہور ہاسٹل لبھاں گے۔"
"میرا بالی وی نوکری لگ گیا اے۔ پینٹ شرٹ پا کے جاندا اے۔ اودا ابا ایڈا خوش ای نچدا پھردا اے۔"
دیکھا آپ نے۔ ماں خود کہیں بھی نہیں ہے۔ دور تک نہیں۔ خود اپنی باتوں میں نہیں ہے۔ اگر ہے تو ماں کے بچے۔ رابعہ بصری کو لوگ آدھی قلندر کہتے ہیں۔ میں کہتا ہوں بچوں میں فنا ہوئی ہوئی ماں ڈیڑھ قلندر ہوتی ہے۔ نفیِ ذات اور کسے کہتے ہیں؟
رانجھا رانجھا کردی نی میں آپے رانجھا ہوئی
ماں کی ڈگریاں ایک طرف۔ تجربہ ایک طرف۔ زندگی کی صعوبتیں اور تکلیفیں ایک طرف۔ خود اپنا آپ ایک طرف۔ ماں اپنا سرمایہ اگر کچھ سمجھتی ہے تو بچے۔ انھی کا فخر ہے۔ انھی کا مان ہے۔ انھی کا گھمنڈ ہے۔ انھی کی آس ہے۔
عرب کہتے ہیں بچے کے لیے ماں سے بڑا مجنوں کوئی نہیں ہوتا۔ کتنی عجیب بات ہے کہ ہم پھر بھی محبت کو ترستے رہتے ہیں۔

راحیلؔ فاروق

اُردُو نِگار

ہیچ نہ معلوم شد آہ کہ من کیستم... میرے بارے میں مزید جاننے کے لیے استخارہ فرمائیں۔ اگر کوئی نئی بات معلوم ہو تو مجھے مطلع کرنے سے قبل اپنے طور پر تصدیق ضرور کر لیں!

1 تبصرہ :