منزلِ عشق تک نہ چاہ نہ راہ

اُردُو نِگار
 منزلِ عشق   تک   نہ   چاہ    نہ  راہ
چل     مگر     کار ساز      ہے     اللہ

وہ پڑے ہیں لغت دھرے کے دھرے
کر    گئی    کام    بے   زبانئِ     آہ  !

اہلِ دل  زلزلوں  کی  زد   میں    جیے
تمھیں    لرزا     گئی       فقط     افواہ


نہ   ہوا  چین  لمحہ  بھر   کو     نصیب
دل    ہے    دنیا    میں    نعمتِ   ناگاہ

پردے میں  تھی  ضمیرِ فن   کی  موت
نہ   کوئی   حادثہ،    نہ   کوئی    گواہ

کر  تو   جائیں  گے  زندگی   راحیلؔ
دل   کے  تیو ر مگر،  خدا  کی  پناہ  !

(2010 ء)

راحیلؔ فاروق

اُردُو نِگار

ہیچ نہ معلوم شد آہ کہ من کیستم... میرے بارے میں مزید جاننے کے لیے استخارہ فرمائیں۔ اگر کوئی نئی بات معلوم ہو تو مجھے مطلع کرنے سے قبل اپنے طور پر تصدیق ضرور کر لیں!

0 آراء :

ایک تبصرہ شائع کریں