میری محبت اس کے حوالے جس نے محبت پیدا کی

اُردُو نِگار
میری محبت اس کے حوالے جس نے محبت پیدا کی
گلیاں کوچے چھان چکا ہوں، تاب نہیں ہے صحرا کی

یاد نہیں ہے؟ تیرے بدلنے، میرے بدلنے کی باتیں
ایک زمانے میں لگتی تھیں باتیں اور ہی دنیا کی؟

باز آئے باز آئے میاں! ہم، تم سے ہمارا میل ہی کیا؟
سادہ لوح تھے، کرنے لگے تھے چالاکوں سے چالاکی

دیکھنے والو! دیکھتے رہنا، کرنے والے کر بھی گئے
تم نے گو کہ تماشا جانا، ہم نے گو کہ تمنا کی

دل کو لہو اب کرتا ہے راحیلؔ! کسی کی خاطر کون؟
ہم نے کیا اور شہر کی خلقت آنکھیں پھاڑ کے دیکھا کی

راحیلؔ فاروق

۲۰۱۰ء​

راحیلؔ فاروق

اُردُو نِگار

ہیچ نہ معلوم شد آہ کہ من کیستم... میرے بارے میں مزید جاننے کے لیے استخارہ فرمائیں۔ اگر کوئی نئی بات معلوم ہو تو مجھے مطلع کرنے سے قبل اپنے طور پر تصدیق ضرور کر لیں!

0 آراء :

ایک تبصرہ شائع کریں