طرحی غزل: یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے؟

نہ گدا آستاں سے اٹھتا ہے​
نہ ستم نیم جاں سے اٹھتا ہے​

نالہ اٹھتا ہے، اٹھ نہیں سکتا​
جب دلِ ناتواں سے اٹھتا ہے​

ہے قفس مدفنِ ہزار الم​
کب یہ بوجھ آشیاں سے اٹھتا ہے​

​کارواں دل کا اور ہے ظالم​
یہ غبار آسماں سے اٹھتا ہے​

ہو چکا راکھ دل تو مدت سے​
’یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے‘​

آخرِ کار اٹھ گیا راحیلؔ۔۔۔​
غیر کب درمیاں سے اٹھتا ہے؟​

راحیلؔ فاروق

12 جنوری، 2012ء
(اردو محفل کے ایک آن لائن طرحی مشاعرے کے لیے کہی گئی)

تبصرہ کیجیے