عشق ہارا مگر لڑا تو سہی

تبصرہ کیجیے