چھن گئے خود سے تمھارے ہو گئے​

چھن گئے خود سے تمھارے ہو گئے​
تم پہ عاشق دل کے مارے ہو گئے​

کچھ دن آوارہ پھرے سیارہ وار​
رہ گئے تم پر ستارے ہو گئے​

تجھ پہ قرباں اے جمالِ عہد سوز​
جس کے بیاہے بھی کنوارے ہو گئے​

کیا اسی کو کہتے ہیں ربطِ دلی
چور دل کے جاں سے پیارے ہو گئے​

ہم تھے تیرے خاکساروں میں شمار​
حاسدوں میں چاند تارے ہو گئے​

چار نظریں چار باتیں چار دن​
ہم تمھارے تم ہمارے ہو گئے​

اک نظر کرنے سے تیرا کیا گیا
اہلِ دل کے وارے نیارے ہو گئے​

کچھ تو خود دل پھینک تھے راحیلؔ ہم​
کچھ اُدھر سے بھی اشارے ہو گئے​

 

راحیلؔ فاروق

تبصرہ کیجیے